Thursday , November 23 2017
Home / Citrus / Citrus post harvest technology and handling

Citrus post harvest technology and handling

آج کل کنو اور دیگر ترشادہ پھلوں کی کٹائی کا موسم چل رہا ہے . اورپاکستان میں پھل اورسبزیاں 35 سے40 فیصد تک برداشت کےمرحلےمیں ضایع ہوجاتی ہیں . جس میں صرف کٹائی کے وقت 5 سے 8 فیصد ، 15سے 20 فیصد کٹے ہووے پھل و سبزی کو اکٹھا کرنے میں ، 5 فیصد سٹورکرنے میں اور . 10سے 12 فیصد ترسیل میں ضا یع ہو جاتا ہے

اگر آج سے تہیہ  کر لیں کہ اپنی آمدن کے  دشمن ہم نہیں بنیں گے تو ہمارے ذاتی اور ملکی حالات ٹھیک ہو سکتے ہیں . پس ذرا ایک نظر کنو کی کٹائی اور منڈ ی تک ترسیل کرنے کے مکمل مرحلہ کو یہاں سے سیکھ لیں اور عمل پیرا ہوں

Pakistan k farmer ka marketing hi masla hae ……… wajah ye hae kih us ko marekting nahin aati …….. jab kih aaj kal karobaar marketing ka hi hae ………. ek kinnow 5/- ka farmer sale kerta ho gaa ………. aur dabay wala juice wo khud 25/- ka leta hae jis mein shayad ek kinow ka juice bhi nahin ho gaa …………. wajah sirf marketing

Sab farmers say request hae kih apni chez ki marketing aur packing per tawajah dein ……….aur en points per amal karein,

  • Saafai say katai
  • Dhulai
  • Grading
  • Packing

ye steps aap small scale per ker saktay hain ……….. es saal say hi start ker dein ……….

ایک کسان سے تو ایک ریڑھی والا اچھا ہے جو کم از کم پھلوں کو دھو کر درجہ بندی کر ک فروخت کرتا ہے ……. اگر ایک ریڑھی والے ک پاس مٹی سے اٹے ہوۓ پھلوں کا ایک ڈھیر ہو تو کیا آپ اس سے پھل لیں گے ؟؟؟

لائف بوائے اور سیف گارڈ والے اپنے صابن کو کیوں پیک کرتے ہیں ؟ وہ کیوں بغیر پیک کے اپنا مال مارکیٹ میں نہیں ڈالتے ؟ وو کیوں اپنی پروڈکٹس پر صفا ت بیان کرتے ہیں ؟ حالاں کہ دونوں ایک طرح کے صابن ہیں …….
پاکستان میں 25 – 30 فی صد تک پھل کھیت سے منڈی تک ضایع ہو جاتا ہے . اگر کسان نے وو باغ کسی بیوپاری کو فروخت کیا ہے تو وہ بیوپاری اتنا نقصان اپنی جیب سے نہیں پورا کرتا … وو باغ کا ریٹ اس نقصان کو نکا ل کر لگاۓ گا …. اگر ایک کسان اپنی فصل خود ہی مارکیٹ کرے اور اس نقصان کو کم کر لے اور دھلائی اور درجہ بندی پر دھیا ن دے تو کافی منافع کما سکتا ہے ……. لیکن کسسان کی سوچ میں یہ کام اس کا نہیں ہے ….. کیا صابن والے یہ کہہ سکتے ہیں کہ صابن پر رپپر یا کاغذ کوئی اور چڑھا ے …… ان کا کام صرف صابن بنانا ہے ؟؟

!!!آپ کی رائے کا انتظار رہے گا……  ذرا سوچیے گا ضرور

بشکریہ تصاویر: ادارہ تحقیقات ترشادہ پھل سرگودھا

Citrus_Page_085

Citrus_Page_085
Picture 1 of 11

About Naveed Ahmad

Naveed Ahmad is a Software Engineer, a progressive farmer, a blogger, a social media expert, a writer, an anchor and the Chairman of R & D Board of RARI Bahawalpur. Other than the CEO of this website and Agrimandi.pk, he is active on fb at fb.com/AgricultureDotPk and at Youtube channel with Agriculture.pk name.

2 comments

  1. Bashir Ahmed Tahir

    Thanks very much sir.it’s a wonderful job.much more needed guidance requires to the farmer’s across the country. Keep it up and Allah Almighty will keep you in protection. Thanks again sir

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *